قومی ائرلائن کا لوگو نہ بدلیں، چیف جسٹس

سپریم کورٹ کے چیف جسٹس ثاقب نثار نے قومی ایئر لائن پی آئی اے کے جہازوں کا لوگو تبدیل کرنے پر نوٹس لیتے ہوئے قومی پرچم ہٹانے سے روک دیا ہے _
پاکستان 24 کے مطابق ایک مقدمے کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے پی آئی اے کے جہازوں سے قومی پرچم ہٹائے جانے کا نوٹس لیا اور کہا کہ جھنڈے کی جگہ ایک جانور کی تصویر لگائی جا رہی ہے، چیف جسٹس نے پوچھا کہ ایک جانور کے پینٹ ہونے پر کتنی لاگت آئے گی _
قومی ائرلائن کے منیجنگ ڈائریکٹر مشرف رسول نے بتایا کہ ایک جہاز پر 27 لاکھ کی لاگت آئے گی، مارخور ہمارا قومی جانور ہے اسکی تصویر پینٹ کر رہے ہیں، ہر جہاز کو 4 سال بعد دوبارہ پینٹ کرنا ہوتا ہے _ چیف جسٹس نے کہا کہ لاگت 27 نہیں 34 لاکھ روپے ہے، کیا پی آئی اے میں منافع میں ہے جو ایسے کام کر رہی ہے، چیف جسٹس نے کہا کہ حکومت نے پی آئی اے کو 20 ارب کا بیل آوٹ پیکج دیا ہے، پیسے پی آئی اے کی بہتری کیلئے دئیے ہیں پینٹ کیلئے نہیں _

چیف جسٹس ثاقب نثار نے پوچھا کہ کل رات میری فلائٹ بھی ڈیڑہ گھنٹہ تاخیر کا شکار ہوئی، ڈیڑھ گھنٹہ تاخیر کی کیا وجہ ہے؟ ایم ڈی نے جواب دیا کہ جہاز کی مرمت تاخیر کی وجہ بنی، ایم ڈی پی آئی اے سے چیف جسٹس نے پوچھا کہ آپ کی بھابی پی آئی اے میں کیا کر رہی ہیں؟ پاکستان 24 کے مطابق ایم ڈی نے کہا کہ میرا کوئی رشتہ دار پی آئی اے میں نہیں، حلفا کہتا ہوں کسی رشتہ دار کو بھرتی نہیں کیا _ چیف جسٹس نے کہا کہ آپ کی تعیناتی کے خلاف درخواست بھی زیر التواء ہے _ ایم ڈی نے کہا کہ اب تک صرف ایک جہاز کو پینٹ کیا ہے، باقی جہازوں کو نہیں کریں گے _
سانحہ ائیربلیو متاثرین کے امدادی چیک بھی عدالت میں پیش کئے گئے اور بتایا گیا کہ سانحہ کے 142 شہدا کے اہل خانہ کو معاوضہ دے چکے ہیں، وکیل نے کہا کہ بقیہ 10 متاثرین کے چیک عدالت کو پیش کر دئیے ہیں، ائر بلیو کے وکیل نے بتایا کہ متاثرین کو فی کس 50 لاکھ کی امداد دی ہے _ چیف جسٹس نے کہا کہ متاثرین کو صرف امداد ہی نہیں مارک اپ بھی دلوائیں گے _

مزید دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے