پاکستانی بلے باز شکست کھانے سے باز نہ آئے

پاکستانی بلے بازوں نے نیوزی لینڈ کی جھولی میں ایک آسانی جیت ڈال کر وطن واپس روانہ کر دیا ۔ ابوظہبی ٹیسٹ میں نیوزی لینڈ نے پاکستان کو بآسانی شکست دیکر ٹیسٹ سیریز 1-2 سے اپنے نام کرلی۔

تیسرا اور فیصلہ کن میچ ابوظہبی کے شیخ زید اسٹیڈیم میں کھیلا گیا، نیوزی لینڈ نے کھیل کے آخری روز 7 وکٹ پر 353 رنز بنانے کے بعد دوسری اننگز ڈیکلیئر کردی اور پاکستان کو جیت کیلیے 280 رنز کا ہدف دیا جس کے جواب میں قومی ٹیم 156 رنز پر پویلین لوٹ گئی۔

ہدف کے تعاقب میں پاکستانی بلے بازوں نے ایک بار پھر مایوس کن کارکردگی کا مظاہرہ کیا اور صرف 55 رنز پر آدھی ٹیم پویلین واپس لوٹ گئی، ٹیسٹ کریئر کا آخری میچ کھیلنے والے محمد حفیظ اپنی آخری اننگز یادگار نہ بناسکے اور صرف 8 رنز پر ہی ٹم ساؤتھی کو وکٹ دے بیٹھے۔

پچھلے میچ کے سنچری میکر اظہر علی بھی زیادہ دیر وکٹ پر نہیں رکے اور 5 رنز بنانے کے بعد آوٹ ہوئے ۔ ان فارم مڈل آرڈر بلے باز حارث سہیل بھی امیدوں پر پورا نہ اترسکے اور صرف 9 رنزبنانے کے بعد ہی پویلین واپس لوٹ گئے، حارث کے آؤٹ ہونے کے بعد اگلی ہی گیند پر پہلی اننگز میں تھری فیگر اننگز کھیلنے والے اسد شفیق کھاتہ کھولے بغیر پویلین لوٹ گئے۔

اوپننگ بلے باز امام الحق نے کچھ دیر مزاحمت کی لیکن 22 رنز پر ان کی ہمت بھی جواب دے گئی۔ کپتان سرفراز احمد بھی زیادہ دیر وکٹ پر نہ ٹھہرسکے اور 28 رنز بناکر ولیم سمر ویل کا شکار بنے۔ بلال آصف اور یاسر شاہ کو ٹم ساؤتھی نے پویلین بھیجا۔ بابراعظم نصف سنچری بنانے والے واحد کھلاڑی رہے، وہ 51 رنز پر اعجاز پٹیل کا شکار بنے۔

نیوزی لینڈ کی جانب سے ٹم ساؤتھی ، ولیم سمر ویل اور اعجاز پٹیل نے 3،3 وکٹیں حاصل کیں۔ اس سے قبل کھیل کے آخری دن نیوزی لینڈ نے اننگز کا آغاز 272 رنز 4 کھلاڑیوں کے نقصان پر کیا تو کین ولیمسن بغیر کسی رن کا اضافہ کیے پویلین لوٹ گئے۔ کین ولیمسن کے 139 رنز پر آؤٹ ہونے کے بعد نکولس نے نیوزی لینڈ کا اسکور آگے بڑھایا اور سنچری اسکور کی، نکولس نے 126 رنز بنائے اور ناقابل شکست رہے۔

میچ کی پہلی اننگز میں نیوزی لینڈ کے 274 رنز کے جواب میں پاکستان کی ٹیم 348 رنز بناکر آؤٹ ہوگئی تھی۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے