چیئرمین نیب ویڈیو والی خاتون عدالت میں

پاکستان میں احتساب کے قومی ادارے کے سربراہ جاوید اقبال کی مبینہ سیکس ویڈیو سامنے لانے والی خاتون طیبہ گل لاہور کی احتساب عدالت میں پیش ہو گئیں جہاں ان کے خلاف فراڈ کا ریفرنس زیر سماعت ہے۔

طیبہ کے شوہر فاروق نول کو بھی اس مقدمے میں جیل سے عدالت لایا گیا۔

چئیرمین نیب کی جانب سے دونوں میاں بیوی پر شہریوں کو لوٹنے کا ریفرنس بنایا گیا ہے۔

احتساب عدالت کے جج جواد الحسن کیس کی سماعت کرتے ہوئے اگلے ہفتےملزموں کو ریفرنس کی کاپیاں فراہم کرنے کی ہدایت کی جس پر ملزمہ طیبہ گل نے کہا کہ ریفرنس کی کاپیاں اج ہی فراہم کیں جائیں۔

جج نے کہا کہ پہلے یہ دیکھ لیں کہ ریفرنس کی کاپیاں مکمل ہیں یا نہیں پھر آپ کو فراہم کردیں گے تاہم طیبہ نے اصرار کیا کہ شوہر کی رہائی کے لیے ہائیکورٹ میں ضمانت کی درخواست دائر کرنا ہے لہذا آج ہی کاپیاں فراہم کیں جائیں۔

عدالت نے طیبہ گل کے اصرار پر اج ہی ریفرنس کی کاپیاں فراہم کرنے کی ہدایت کی ہے۔

خیال رہے کہ طیبہ گل اس کیس میں ضمانت پر ہیں۔

چیئرمین نیب جاوید اقبال کے ساتھ ویڈیو سامنے آنے کے بعد نیب نے چئیرمین کے دستخطوں سے دونوں میاں بیوی کے خلاف فراڈ کرنے کا ریفرنس دائر کیا۔

عدالت نے طیبہ کے شوہر فاروق کے جوڈیشل ریمانڈ میں 14 دن تک توسیع کرتے ہوئے سماعت ملتوی کر دی۔

طیبہ نے عدالت کے باہر کہا کہ کیس جھوٹا ہے جس کو ہمارے خلاف وعدہ معاف گواہ بنایا اس پر ہم بہت پہلے مقدمے کے لیے درخواست دے چکے ہیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے