جج ویڈیو کی تحقیقات کا اعلان

پاکستان میں حکومت نے سابق وزیراعظم نواز شریف کو سزا سنانے والے جج ارشد ملک کی مبینہ اعترافی ویڈیو کی فرانزک اور تفصیلی تحقیقات کرانے کا اعلان کیا ہے۔

وزیراعظم کی مشیر برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے سیالکوٹ میں ایک پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ حکومت اس معاملے میں اپنا کردار ادا کرے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ جج ارشد ملک کا بیان آ گیا ہے جنہوں نے ویڈیو کو جعلی قرار دیا ہے۔ ”حکومت ویڈیو کی تفصیلی انکوائری کرائے گی اور اس کے پس پردہ سازش کو بے نقاب کرے گی۔“

فردوس عاشق نے کہا کہ ویڈیو پر الیکٹرانک کرائم ایکٹ اور شہرت کو خراب کرنے کے قانون کے تحت مقدمات درج کرائے جا سکتے ہیں جبکہ توہین عدالت کی کارروائی بھی کی جا سکتی ہے۔

متعلقہ مضامین