بوجھ اٹھانا ہوگا

اظہر سید

اس ملک کے ساتھ پناما ڈرامہ اور اس سے قبل دھرنے کے ذریعے جو کچھ کیا گیا ہے اس کا بوجھ بھی انہیں ہی اٹھانا ہو گا جو پردے کے پیچھے ہدایت کار تھے ۔قاتل کے پاس قتل کرنے کا جواز ہوتا ہے ،جو قوتیں ملکی معیشت کا جان بوجھ کر یا انجانے میں قتل کر رہی ہیں اس کی زمہ داری بھی انہیں کے کاندھوں پر ہو گی جو حب الوطنی کے اپنے مفہوم کے تحت کسی کو غدار اور کسی کو مودی کا یار قرار دیتے ہیں ،جو پردے کے پیچھے اور کبھی کھلے عام عوام کی منتخب حکومتیں گراتے ہیں اور کٹھ پتلیاں اقتدار کی مسند پر بٹھا حب الوطنی کے اپنے مفہوم کے مطابق اقدامات کرتے ہیں انہیں اب بوجھ بھی اٹھانے کیلئے تیار رہنا ہو گا۔
پاکستانیوں کے ساتھ کھلا دھوکہ اور فراڈ ہو رہا ہے ہمارے پاس دلائل ہیں ملکی معیشت کو منظم انداز میں نشانہ بنایا جا رہا ہے ۔اس معاشی افراتفری کے پیچھے سی پیک کو ہدف بنانا ہے اس کے متعلق حکمت سازوں کو ہی پتہ ہو گا ۔ہمیں تو اتنی خبر ہے درامدی پٹرول مہنگا اور گیس سستی ہے ۔جب سی این جی کی قیمت پٹرول سے بڑھا دی جائے گی تو کم قیمت گیس کی درآمد کم ہو جائے گی اور مہنگے پٹرول کی درآمد بڑھ جائے گی ۔لوگ مہنگی سی این جی کی بجائے پٹرول کا استمال شروع کریں گے تو پھر تجارتی خسارہ بڑھے گا ۔سی این جی کی قیمت جنہوں نے بڑھانے کا فیصلہ کیا انکی نیت پر شک کرنا چاہے کیونکہ یہ بہت سادہ سی بات ہے ۔
سالانہ ترقیاتی پروگرام میں ڈھائی سو ارب روپیہ کی کمی کر دی گئی ہے کفائت شعاری کے نام پر مالی سال کے اختتام تک مزید کتنی کٹوتی ہوتی ہے اس کی جھلک گائے بھنسیوں اور کاروں کی فروخت میں نظر آتی ہے ۔ترقیاتی پروگرام میں کمی کا فیصلہ بھی معیشت کے قتل کے برابر ہے۔250 ارب روپیہ جب ملک بھر میں جاری ترقیاتی منصوبوں میں خرچ ہوتا ہے یہ پیسے اصل میں مارکیٹ میں آتے ہیں ۔ ان سے سیمنٹ سریا تعمیرات کے 40 سے زیادہ صنعتوں کا سامان خریدا جاتا ہے ۔کنٹریکٹر اور ذیلی کنٹریکٹر منصوبوں میں کام کرنے والے ہزاروں لوگوں کو پیسے ملتے ہیں ۔ترقیاتی منصوبوں کے پیسے مختلف طریقوں سے مارکیٹ میں آتے ہیں اور معیشت کا پہیہ چلتا ہے۔
شرح سود میں اضافہ کا فیصلہ بھی معیشت کیلئے خطرناک ہے۔جب سے پناما ڈرامہ اور دھرنہ پروگرام شروع ہوا نجی شعبہ کی طرف سے بینکوں اور مالیاتی اداروں سے قرضے حاصل کرنے کا عمل بھی سست روی کا شکار ہو گیا تھا ۔ اب حکومت نے شرح سود میں اضافہ کر کے معاشی تباہی کے عمل کو تیز تر کر دیا ہے ۔شرح سود میں اضافہ کا فیصلہ جان بوجھ کر کیا گیا ہے ۔ہمارے پاس دلیل یہ ہے مقامی قرضوں کی واپسی اور نئے قرضوں کے حصول کیلئے حکومت نجی شعبہ کے قرضوں کو کم کرنا چاہتی ہے اور خود قرضوں کا بڑا حصہ حاصل کرنا چاہتی ہے۔نجی شعبہ کا قرضہ مارکیٹ میں آتا ہے اور مختلف ہاتھوں میں تقسیم ہو کر معاشی سرگرمیوں میں اضافہ کا باعث بنتا ہے شرح سود میں اضافہ سے حکومت نے نجی شعبہ کی حوصلہ شکنی کی ہے ۔
پاکستان میں صنعتی عمل گزشتہ 20 سال سے تعطل کا شکار ہے ، سرمائے کا بڑا حصہ غیر ترقیاتی کاموں پراپرٹی ،حصص بازار ،گاڑیوں کی خریداری میں استمال ہوتا ہے ۔قانونی اور غیر قانونی سرمائے کا ایک حصہ بیرون ملک منتقل ہوتا ہے لیکن بڑا حصہ بحرحال مقامی مارکیٹ میں ہی خرچ ہوتا ہے۔بلیک منی دنیا کے ہر ملک میں ہے اور بھارت سمیت تمام ترقی پذیر ممالک میں یہ متوازی معیشت ہے ۔امریکہ سمیت تمام ترقی یافتہ ممالک میں بھی ٹیکس چوری ہوتی ہے اور بلیک منی مارکیٹ میں استمال ہوتی ہے۔ترقی یافتہ ممالک میں بلیک منی دوسرے ملکوں کے بینکوں اور مالیاتی اداروں میں کم اور اپنے ملک میں زیادہ استمال ہوتی ہے اور معیشت کا پہیہ چلتا رہتا ہے۔نئی حکومت نے معیشت پر ایک کاری وار نان فائلر پر پراپرٹی اور کاروں کی خریداری کی پابندی لگا کر کیا ہے ۔اب جس کے پاس پیسے ہیں اور وہ ٹیکس دہندہ بھی نہیں وہ کیا کرے گا ؟ وہ کبھی بھی ٹیکس دہندہ نہیں بنے گا ۔جنرل مشرف نے وردی والے فوجیوں سے مشہور زمانہ دوکانوں اور کاروبار کا سروے شروع کرایا تھا صرف ایک ہفتے بعد یہ بھاری پتھر چوم کر واپس رکھ دیا تھا۔نان فائلر پر خریداری کی پابندی لگا کر پوری رئیل اسٹیٹ مارکیٹ تباہ کر دی ہے ۔آٹو موبائل کی صنعت سے منسلک ایک دوست ڈائریکٹر نے ہم سے بات چیت میں کہا نان فائلر کی شرط سے خریداری کا عمل متاثر ہونا شروع ہو گیا ہے اور وینڈر انڈسٹری کے دئے جانے والے آرڈر روکے جا رہے ہیں ۔اب غیر رجسٹرڈ پیسے یا بیرون ملک جائیں گے یا پھر محفوظ علاقوں میں ہجرت کر جائیں گے کہ سرمایہ کا کوئی ملک کوئی مذہب اور کوئی نظریہ نہیں ہوتا۔
روپیہ کی قیمت میں کمی کے تباہ کن فیصلے سے برآمدات تو کیا بڑھنا تھیں الٹا درآمدات مہنگی ہو گئیں "یاد رکھیں روپیہ کی قیمت میں کمی کے اثرات فوجی خریداریوں پر بھی مرتب ہونگے” غیر ملکی قرضوں کے حجم میں اضافہ ہو گیا اور حصص بازار سے غیر ملکی سرمایہ کار بھاگنے لگے۔آج مارکیٹ 11 سو پوائنٹ گری ہے کل پرسوں اور گرے گی ۔چھوٹی موٹی کریکشن آئے گی لیکن روپیہ کی قیمت میں مسلسل گراوٹ سے غیر ملکی سرمایہ کار نہیں آئیں گے۔یہ لوگ معیشت کو نشانہ بنا رہے ہیں معلوم نہیں حتمی ہدف کیا ہے لیکن معاشی تباہی نے سوویت یونین کی طاقتور فوج کو برباد کر دیا تھا۔بھارت ایس 400 دفاعی نظام حاصل کر رہا ہے اور ہم 1300 کلو میٹر میزائل کے تجربے سے خودی کو بلند کر رہے ہیں ۔
ملک میں سیاسی افراتفری پیدا کر کے ، یکطرفہ احتساب سے قومی یکجہتی پیدا نہیں ہو گی ۔دشمن کے عزائم کو میزائلوں کے تجربے سے نہیں بلکہ قومی یکجہتی اور مضبوط معیشت سے ناکام بنایا جاتا ہے ۔پاکستان میں اب بھی جھوٹ اور فراڈ کا بازار چل رہا ہے ۔مدینہ کی مثالی ریاست کے قیام کا فراڈ اب مزید نہیں چل سکتا ۔ہاں اگر منتخب وزیر اعظم دوبئی میں اپنی بہن کے نام اثاثوں کی تحقیقات کا اعلان کرتے اور اپنی پارٹی کے غیر ملکی فنڈنگ کے معاملہ کو مسلسل چار سال سے چھپانے کی عدالتوں اور الیکشن کمیشن میں کوششیں ترک کر دیتے شائد لوگوں کو یقین آجاتا۔
حصص بازار تباہ ہو رہا ہے ،لوگوں نے جو حصص خریدے تھے ان کے ہاتھوں میں چمٹ گئے ہیں ۔بیچنے کی کوشش کرتے ہیں قیمت اور کم ہو جاتی ہے۔رئیل اسٹیٹ مارکیٹ برباد ہو رہی ہے ۔آٹو انڈسٹری سسک رہی ہے اور یہاں دھڑلے سے جھوٹ بولا جا رہا ہے ۔اعلان کر دیا ہے آئی ایم ایف پروگرام لیں گے اب ذرا قوم کو اس پروگرام کی قیمت سے بھی آگاہ کریں کیا یہ قیمت سی پیک ہے جس کیلئے یہ سارا کھیل کھیلا گیا تھا۔ یاد رکھیں چینی ابھرتی ہوئی معیشت ہیں سی پیک پر ان کے 30 ارب ڈالر سے زیادہ خرچ ہو چکے ہیں ۔چینیوں نے ہمیشہ پاکستان کی سلامتی اور دفاع کیلئے مثبت کردار ادا کیا ہے ۔چینیوں کے ساتھ کوئی کھیل کھیلا گیا آپ سچ مچ کی عالمی تنہائی کا شکار ہو جائیں گے اللہ پاکستان کو بدکاروں اور غداروں کے شر سے محفوظ رکھے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے