چین کا پاکستانی گندم اور آلو خریدنے سے انکار

پاکستانی وزیراعظم کے مشیر برائے تجارت عبدالرزاق داؤد نے پارلیمنٹ کی کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا ہے کہ چین نے پاکستان سے گندم، چاول اور آلو خریدنے سے انکار کیا ہے ۔

خیال رہے معاشی مسائل میں گھرے پاکستان نے پڑوسی اور دوست ملک چین کو ایک ارب ڈالر کی زرعی اجناس برآمد کرنے کی پیش کش کی تھی ۔

اسلام آباد میں پیپلز پارٹی کے سید نوید قمر کی صدارت میں قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے تجارت کے اجلاس میں وزیراعظم کے مشیر نے تسلیم کیا کہ ملک میں گندم کو ذخیرہ کرنے کے بہتر انتظامات موجود نہیں ہیں ۔

انہوں نے بتایا کہ اس وقت ملک میں گندم کے 45 ملین ٹن اضافی گندم موجود ہے۔ مشیر تجارت عبدالرزاق داؤد نے کہا کہ حکومت صرف پانچ ملین ٹن گندم خریدے۔

مشیر تجارت کا کہنا تھا کہ پاکستان میں گندم کی گریڈنگ نہیں ہوتی ۔ ملک میں ملتان اور رحیم یار خان سے کوالٹی گندم کی پیدوار ہو رہی ہے ۔

پاکستان نے چین کو ایک ارب ڈالر کی گندم، چینی، آلو اور چاول برآمد کرنے کی پیش کش کی تھی مگر چین نے گندم، چاول اور آلو خریدنے سے انکار کیا ہے ۔

مشیر تجارت نے بتایا کہ چین کو ایک ملین ٹن چینی اور ایک ملین ٹن چاول برآمد کرنے کی آفر کی تھی تاہم وہاں سے صرف دو ہزار ٹن چینی خریدنے پر آمادگی ظاہر کی گئی ۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان چین کو دو ہزار ٹن چینی برآمد کر ے گا، چینی کی برآمد پر کوئی سبسڈی نہیں ہونی چاہیئے۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ چینی کی برآمد پر کوئی سبسڈی نہیں دے جائے گی ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے