کیا طالبان مذاکرات کی جنگ ہارجائیں گے؟

ناصرمغل

امریکہ اور طالبان  کے مذاکرات میں ڈیڈلاک پیداہوگیا ہے۔ فریقین میں معاہدے کے عنوان پر اختلافات ہیں۔امریکی چاہتے ہیں کہ اسے امن معاہدے کا نام دیاجائے۔ طالبان کا کہناہے کہ انخلا بنیادی اورمرکزی اہمیت رکھتاہے۔ 3روزقبل دوحہ میں براہ راست مذاکرات کاآٹھواں مرحلہ شروع ہوا جس کے بارے میں خیال ظاہر کیا جارہاتھا کہ اس راؤنڈمیں طرفین متفق ہوجائیں گے اورمعاہدے کا اعلان بھی کردیاجائے گا۔

اس ضمن میں امریکی میڈیاکی اس رپورٹ کواہم سمجھا گیاجس کے مطابق امریکی حکومت متوقع معاہدے کے تحت افغانستان سے انخلا کی تیاریاں کررہی ہے اورنہ صرف یہ کہ کابل میں امریکی سفارت خانے کاعملہ کم کیاجارہاہے بلکہ فوج کے نصف سپاہی بھی واپس بلائیں جائیں گے۔

برطانوی خبرایجنسی کے مطابق 13اگست سے پہلے معاہدے کااعلان متوقع ہے۔تاہم صورت حال کچھ گڑبڑکاشکارنظرآنے لگی ہے۔طالبان کے دوحہ میں ترجمان سہیل شاہین کاایک پاکستانی روزنامے کوانٹرویومیں کہناہے کہ 80فی صد بات چیت مکمل ہوچکی ہے۔اس گفتگومیں ان کی یہ بات خاصی حیران کن ہے جس کے مطابق افغانستان سے انخلا کامعاملہ ابھی تک مذاکرات کی میزپرنہیں آیااورنہ اسے تحریری صورت میں لایاگیاہے بلکہ امریکہ ایسے اشارے دے رہاہے جن سے لگتاہے کہ وہ افغانستان سے فوج نکالے گا اورہمیں امیدہے کہ گفت وشنید کے تازہ مرحلے میں اس پر معاہدہ ہوجائے گا۔لگ بھگ ایک سال میں اگرانخلا کامعاملہ مذاکرات کی میزپرنہیں آیاتوپھر7راؤنڈزمیں کیابات ہوتی رہی  ہے۔ طالبان ترجمان نے اس کی وضاحت نہیں کی۔

بظاہرلگتاہے کہ امریکہ نے سفارتی میدان میں طالبان کو شکست دے دی ہے یاکم ازکم انہیں الجھالیاہے۔اگر مذاکرات ناکام ہوجاتے ہیں تو امریکہ نئے سرے سے، تیسری بار، افغانستان میں عسکری کارروائیاں شروع کرسکتاہے اوریہ امرمحال نہیں کہ اس بارطالبان کی ہمت جواب دے جائے اوران سے وہ پوزیشن چھن جائے جواس وقت انہیں حاصل ہے، اگرچہ اس کے امکانات کم ہیں تاہم یہ ممکنات میں سے ضرورہے۔

سیاسی چالیں، اورہ بھی امریکہ جیسے استعمارکی، بڑی زبردست ہوتی ہیں، بہت ممکن ہے کہ امریکی دماغوں نے میدان جنگ میں ہاری ہوئی بازی مذاکرات کی میزپرجیتنے کی منصوبہ بندی کی ہو، طالبان کی طرف سے اب تک اس عمل میں بادی النظرمیں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیاگیاہے تاہم نتیجہ بتائے گا کہ وہ کس حدتک کامیاب رہے ہیں۔

طالبان یہ چاہتے ہیں کہ کسی بھی سمجھوتے کی بنیاد میدان جنگ کے نتائج ہوں، اوراگرایساہوتاہے تو اسے طالبان کی فتح تصورکیاجائے گا۔امریکی یقینی طورپرایسی صورت حال سے بچناچاہتے ہیں۔اس لیے بھی وہ باربارکہہ رہے ہیں کہ افغانستان سے انخلا کانہیں بلکہ امن کامعاہدہ ہوگا۔امریکی مذاکرات کارزلمے خلیل زاد نے کہاہے کہ ہم ایسا معاہدہ چاہتے ہیں جو انخلا کاراستہ ہموارکرے۔

دھوپ چھاؤں کے اس کھیل میں کیاپیش رفت ہوتی ہے،اس کا فیصلہ اگلے چندروزمیں ہوجائے گا۔ویسے اگر یہ مذاکرات ناکام رہتے ہیں تو بلاشبہ یہ امرطالبان کے لیے بڑادھچکاثابت ہوگا اورانہیں نئے سرے سے بروئے کارآناپڑے گا جس کے نتیجے میں ان کے اندرٹوٹ پھوٹ بھی ہوسکتی ہے۔درحقیقت یہ اعصاب کی ایسی جنگ ہے جس کانتیجہ مثبت نکلاتو طالبان کو امریکہ کے مقابلے میں کامیاب وکامران تسلیم کیاجائے گا اوراگر نتیجہ منفی ہواتو پھرصورت حال ان کے خلاف چلی جائے گی اوراب تک  طالبان  کا جوتاثر یاساکھ بنی ہے وہ ضائع ہوجائے گی۔امریکہ کے لیے یہ امرکھلے طورپرباعث ندامت ہوگا کہ اسے افغانستان میں ناکام ہوکرنکلناپڑے۔

جہاں تک ناکامیوں کاتعلق ہے تویہ بات  گزشتہ کم ازکم 15سال سے مغربی میڈیا، حکام،ماہرین، محققین اورادارے کہتے آئے ہیں۔اب اس پر مہرثبت ہونی ہے اورامریکہ جیسی سپرپاورکے لیے بہرحال یہ شرمندگی کی بات ہوگی۔لیکن اگرسفارت کاری کے ذریعے امریکہ نے ایسی صورت حال کورونماہونے سے ٹال دیاتویہ اس کی فتح تصورکی جائے گی۔بہرحال، کاؤنٹ ڈاؤن شروع ہوچکا ہے۔ میدان جنگ کی فتح کی تصدیق مذاکرات کی میزپرہورہی ہے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے